Aye Ishq Tu Gard e Safar Bana

0
9
Aye Ishq Tu Gard e Safar Bana -  - Designed Poetry
Aye Ishq Tu Gard e Safar Bana, Terri Aor Bhalla Tauqeer Hai Kiya
Tu Khud Hi Hassarat Ka Maara, Terra Khaab Hai Kia Taabeer Hai Kiya
Aye Ishq Tu Bikta Rehta Hai Kabhi Rahon Mein Kabhi Banhon Mein
Tu Bojh Hai Dil Ki Duniya Ka Merrey Wastey Tu Jageer Hai Kiya
Aye Ishq Mazar Pey Raqs Terra Aor Katbon Par Hai Aks Terra
Tu Bujhtey Diyey Ka Dhuwan Hai Bass, Tu Kia Janey Tanveer Hai Kiya
Tujhey Sunna Tha Mein Nay Qisson Mein, Iss Tann Par To Abb Jhaila Hai
Merra Roop Rang To Zard Hua, Mjhey Khabar Nahin Tasveer Hai Kiya
Tu Meem Se Ain Bana Thaa Kion? Abb Chain Se Bain Bana Hai Kion?
Mein Ab Tak Poochti Phirti Hoon, Merrey Pairon Mein Zanjeer Hai Kiya
Inn Ashkon Ka T Zikker Hi Kiya, Tujhe Ishq Laho Se Bhi Likha
Kabhi Parh To Sahi Unn Nohon Ko, Tujhe Ilm To Ho Tehreer Hai Kiya
اے عشق تو گرد سفر بنا، تری اور بھلا توقیر ہے کیا
تو خود ہی حسرت کا مارا، ترا خواب ہے کیا تعبیر ہے کیا
اے عشق تو بکتا رہتا ہے کبھی راہوں میں کبھی بانہوں میں
تو بوجھ ہے دل کی دنیا کا مرے واسطے تو جاگیر ہے کیا
اے عشق مزار پہ رقص ترا، اور کتبوں پر ہے عکس ترا
تو بجھتے دیئے کا دھواں ہے بس، تو کیا جانے تنویر ہے کیا
تجھے سنا تھا میں نے قصوں میں، اس تن پر تو اب جھیلا ہے
مرا روپ رنگ تو زرد ہوا، مجھے خبر نہیں تصویر ہے کیا
تو میم سے عین بنا تھا کیوں؟ اب چین سے بین بنا ہے کیوں؟
میں اب تک پوچھتی پھرتی ہوں، مرے پیروں میں زنجیر ہے کیا
ان اشکوں کا تو ذکر ہی کیا، تجھے عشق لہو سے بھی لکھا
کبھی پڑھ تو سہی ان نوحوں کو، تجھے علم تو ہو تحریر ہے کیا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here